کمبخت دل برا ہوا تری آہ آہ کا

حفیظ جالندھری

کمبخت دل برا ہوا تری آہ آہ کا

حفیظ جالندھری

MORE BYحفیظ جالندھری

    کمبخت دل برا ہوا تری آہ آہ کا

    حسن نگاہ بھی نہ رہا گاہ گاہ کا

    چھیڑو نہ میٹھی نیند میں اے منکر و نکیر

    سونے دو بھائی میں تھکا ماندہ ہوں راہ کا

    میرے مقلدوں کو مری راہ شوق میں

    ہر گام پر نشان ملا سجدہ گاہ کا

    دل سا گواہ حشر میں آ کر پھسل گیا

    اب رحم پر معاملہ ہے داد خواہ کا

    کس منہ سے کہہ رہے ہو ہمیں کچھ غرض نہیں

    کس منہ سے تم نے وعدہ کیا تھا نباہ کا

    دل لینے والی بات اسی دل سے پوچھیے

    مالک یہی ہے میرے سفید و سیاہ کا

    پیش خدا چلو تو مزہ جب ہے اے حفیظؔ

    نعرہ ہو لب پہ اشہد ان لا الہ کا

    مأخذ :
    • کتاب : Kulliyat-e-Hafeez Jalandhari (Pg. 190)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY