کم پرانا بہت نیا تھا فراق

حبیب جالب

کم پرانا بہت نیا تھا فراق

حبیب جالب

MORE BYحبیب جالب

    INTERESTING FACT

    بیاد فراق

    کم پرانا بہت نیا تھا فراق

    اک عجب رمز آشنا تھا فراق

    دور وہ کب ہوا نگاہوں سے

    دھڑکنوں میں بسا ہوا ہے فراق

    شام غم کے سلگتے صحرا میں

    اک امنڈتی ہوئی گھٹا تھا فراق

    امن تھا پیار تھا محبت تھا

    رنگ تھا نور تھا نوا تھا فراق

    فاصلے نفرتوں کے مٹ جائیں

    پیار ہی پیار سوچتا تھا فراق

    ہم سے رنج و الم کے ماروں کو

    کس محبت سے دیکھتا تھا فراق

    عشق انسانیت سے تھا اس کو

    ہر تعصب سے ماورا تھا فراق

    مآخذ :
    • کتاب : Kulliyat-e-Habib Jalib (Pg. 328)
    • Author : Habib Jalib
    • مطبع : Tahir Sons Publishers (2012)
    • اشاعت : 2012

    موضوعات:

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY