کون اترا نظر کے زینے سے

الطاف مشہدی

کون اترا نظر کے زینے سے

الطاف مشہدی

MORE BYالطاف مشہدی

    کون اترا نظر کے زینے سے

    محفل دل سجی قرینے سے

    شیخ صاحب مجھے عقیدت ہے

    گنگناتے ہوئے مہینے سے

    مے کو گل رنگ کر دیا کس نے

    خون لے کر کلی کے سینے سے

    کوئی ساحل نہ ناخدا اپنا

    ہم تو مانوس ہیں سفینے سے

    کس کا اعجاز ہے کہ رندوں کو

    چین ملتا ہے آگ پینے سے

    پی کے جیتے ہیں جی کے پیتے ہیں

    ہم کو رغبت ہے ایسے جینے سے

    مے کہ تقدیس کا جواب کہاں

    داغ دھلتے ہیں دل کے پینے سے

    ہائے الطافؔ وہ عروس بہار

    جھانکتی ہے جو آبگینے سے

    مأخذ :
    • کتاب : urdu kii chunii hu.ii gazale.n (Pg. 47)
    • Author : devendra issar
    • مطبع : sahityaa parkaashak maalbaara delhi (1963)
    • اشاعت : 1963

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY