غم کی سوغات ہے خموشی ہے

اسلم کولسری

غم کی سوغات ہے خموشی ہے

اسلم کولسری

MORE BYاسلم کولسری

    غم کی سوغات ہے خموشی ہے

    چاندنی رات ہے خموشی ہے

    میں اکیلا نہیں کہ باتیں ہوں

    وہ مرے سات ہے خموشی ہے

    میری بربادیوں کی سازش میں

    ضبط کا ہات ہے خموشی ہے

    کیسا آسیب ہے کہ ہر جانب

    جشن جذبات ہے خموشی ہے

    وقت کے زخم زخم ہونٹوں پر

    ان کہی بات ہے خموشی ہے

    پھر اسی طرح گرم ماتھے پر

    کانپتا ہاتھ ہے خموشی ہے

    صبح نو ہو کہ شام غم اسلمؔ

    گوشہ‌‌ٔ ذات ہے خموشی ہے

    موضوعات:

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY