مریض غم کے سہارو کوئی تو بات کرو

شکیب جلالی

مریض غم کے سہارو کوئی تو بات کرو

شکیب جلالی

MORE BYشکیب جلالی

    مریض غم کے سہارو کوئی تو بات کرو

    اداس چاند ستارو کوئی تو بات کرو

    کہاں ہے ڈوب چکا اب تو ڈوبنے والا

    شکستہ دل سے کنارو کوئی تو بات کرو

    مرے نصیب کو بربادیوں سے نسبت ہے

    لٹی ہوئی سی بہارو کوئی تو بات کرو

    کہاں گیا وہ تمہارا بلندیوں کا جنون

    بجھے بجھے سے شرارو کوئی تو بات کرو

    اسی طرح سے عجب کیا جو کچھ سکون ملے

    غم فراق کے مارو کوئی تو بات کرو

    تمہارا غم بھی مٹاتی ہیں مستیاں کہ نہیں

    شراب ناب کے مارو کوئی تو بات کرو

    تمہاری خاک اڑاتا نہیں شکیبؔ تو کیا

    اداس راہ گزارو کوئی تو بات کرو

    مآخذ :
    • کتاب : Kulliyat Shakeb Jamali (Pg. 209)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY