رات تاریک راستے خاموش

اقبال ماہر

رات تاریک راستے خاموش

اقبال ماہر

MORE BYاقبال ماہر

    رات تاریک راستے خاموش

    منزلوں تک ہیں قمقمے خاموش

    آرزوؤں کے ڈھے گئے اہرام

    حسرتوں کے ہیں مقبرے خاموش

    دل کے اجڑے نگر سے گزرے ہیں

    کتنی یادوں کے قافلے خاموش

    منتظر تھے جو میری آمد کے

    ہیں منڈیروں پہ وہ دئیے خاموش

    میرے مستقبل محبت پر

    زندگی کے ہیں تجربے خاموش

    ذہن آذر ہے خواب گاہ جمود

    فکر و فن کے ہیں بت کدے خاموش

    موضوعات:

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY