خیال یار سدا چشم نم کے ساتھ رہا

نظیر اکبرآبادی

خیال یار سدا چشم نم کے ساتھ رہا

نظیر اکبرآبادی

MORE BYنظیر اکبرآبادی

    خیال یار سدا چشم نم کے ساتھ رہا

    مرا جو چاہ میں دم تھا وہ دم کے ساتھ رہا

    گیا سحر وہ پری رو جدھر جدھر یارو

    میں اس کے سایہ صفت ہر قدم کے ساتھ رہا

    پھرا جو بھاگتا مجھ سے وہ شوخ آہو چشم

    تو میں بھی تھک نہ رہا گو وہ رم کے ساتھ رہا

    اکیلا اس کو نہ چھوڑا جو گھر سے نکلا وہ

    ہر اک بہانے سے میں اس صنم کے ساتھ رہا

    نظیرؔ پیر ہوا تو بھی بار ناز بتاں

    کچھ اس کے دوش کے کچھ پشت خم کے ساتھ رہا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY