کھینچی ہے تصور میں تصویر ہم آغوشی

بیدم شاہ وارثی

کھینچی ہے تصور میں تصویر ہم آغوشی

بیدم شاہ وارثی

MORE BYبیدم شاہ وارثی

    کھینچی ہے تصور میں تصویر ہم آغوشی

    اب ہوش نہ آنے دے مجھ کو مری بے ہوشی

    پا جانا ہے کھو جانا کھو جانا ہے پا جانا

    بے ہوشی ہے ہشیاری ہشیاری ہے بے ہوشی

    میں ساز حقیقت ہوں دم ساز حقیقت ہوں

    خاموشی ہے گویائی گویائی ہے خاموشی

    اسرار محبت کا اظہار ہے نا ممکن

    ٹوٹا ہے نہ ٹوٹے گا قفل در خاموشی

    ہر دل میں تجلی ہے ان کے رخ روشن کی

    خورشید سے حاصل ہے ذروں کو ہم آغوشی

    جو سنتا ہوں سنتا ہوں میں اپنی خموشی سے

    جو کہتی ہے کہتی ہے مجھ سے مری خاموشی

    یہ حسن فروشی کی دوکان ہے یا چلمن

    نظارہ کا نظارہ روپوشی کی روپوشی

    یاں خاک کا ذرہ بھی لغزش سے نہیں خالی

    مے خانۂ دنیا ہے یا عالم بے ہوشی

    ہاں ہاں مرے عصیاں کا پردہ نہیں کھلنے کا

    ہاں ہاں تری رحمت کا ہے کام خطا پوشی

    اس پردے میں پوشیدہ لیلائے دو عالم ہے

    بے وجہ نہیں بیدمؔ کعبے کی سیہ پوشی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY