خزاںؔ میں خوبیاں ایسے بہت ہیں

محبوب خزاں

خزاںؔ میں خوبیاں ایسے بہت ہیں

محبوب خزاں

MORE BYمحبوب خزاں

    خزاںؔ میں خوبیاں ایسے بہت ہیں

    خرابی ایک ہے بنتے بہت ہیں

    کوئی رستہ کہیں جائے تو جانیں

    بدلنے کے لیے رستے بہت ہیں

    نئی دنیا کے سندر بن کے اندر

    پرانے وقت کے پودے بہت ہیں

    ہوئے جب سے زمانے بھر کے ہمراہ

    ہم اپنے ساتھ بھی تھوڑے بہت ہیں

    لگاوٹ ہے ستاروں سے پرانی

    رقابت ہے مگر ملتے بہت ہیں

    بہت ہوگا تو یہ سوچو گے شاید

    کہ ہم بھی تھے یہاں جیسے بہت ہیں

    ہے سب صورت کا چکر، خواب معنی

    دکھائے ہیں بہت دیکھے بہت ہیں

    جسارت دل میں کیا ہو فن میں کیا ہو

    ملازم پیشہ ہیں ڈرتے بہت ہیں

    کسی سے کیوں الجھتے کیا الجھتے

    یہ دھاگے خود بہ خود الجھے بہت ہیں

    تھکن چاروں طرف ہے چلتے جاؤ

    پہنچتا کون ہے چلتے بہت ہیں

    خفا ہم سے نہ ہو اے چشم جاناں

    ہم اس انداز پر مرتے بہت ہیں

    کہو یہ بھی خزاںؔ کہنے سے پہلے

    جو کہتے کچھ نہیں کہتے بہت ہیں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY