خود سے ملنا ملانا بھول گئے

انجم لدھیانوی

خود سے ملنا ملانا بھول گئے

انجم لدھیانوی

MORE BYانجم لدھیانوی

    خود سے ملنا ملانا بھول گئے

    لوگ اپنا ٹھکانا بھول گئے

    رنگ ہی سے فریب کھاتے رہیں

    خوشبوئیں آزمانا بھول گئے

    تیرے جاتے ہی یہ ہوا محسوس

    آئنے جگمگانا بھول گئے

    جانے کس حال میں ہیں کیسے ہیں

    ہم جنہیں یاد آنا بھول گئے

    پار اتر تو گئے سبھی لیکن

    ساحلوں پر خزانہ بھول گئے

    دوستی بندگی وفا و خلوص

    ہم یہ شمعیں جلانا بھول گئے

    مأخذ :
    • کتاب : Lafz Magazine-01 Dec-10 to 28 Feb-11

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY