خوشبو جیسے لوگ ملے افسانے میں

گلزار

خوشبو جیسے لوگ ملے افسانے میں

گلزار

MORE BYگلزار

    خوشبو جیسے لوگ ملے افسانے میں

    ایک پرانا خط کھولا انجانے میں

    شام کے سائے بالشتوں سے ناپے ہیں

    چاند نے کتنی دیر لگا دی آنے میں

    رات گزرتے شاید تھوڑا وقت لگے

    دھوپ انڈیلو تھوڑی سی پیمانے میں

    جانے کس کا ذکر ہے اس افسانے میں

    درد مزے لیتا ہے جو دہرانے میں

    دل پر دستک دینے کون آ نکلا ہے

    کس کی آہٹ سنتا ہوں ویرانے میں

    ہم اس موڑ سے اٹھ کر اگلے موڑ چلے

    ان کو شاید عمر لگے گی آنے میں

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    غلام علی

    غلام علی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY