خواب کا رشتہ حقیقت سے نہ جوڑا جائے

ملک زادہ منظور احمد

خواب کا رشتہ حقیقت سے نہ جوڑا جائے

ملک زادہ منظور احمد

MORE BY ملک زادہ منظور احمد

    خواب کا رشتہ حقیقت سے نہ جوڑا جائے

    آئینہ ہے اسے پتھر سے نہ توڑا جائے

    اب بھی بھر سکتے ہیں مے خانے کے سب جام و سبو

    میرا بھیگا ہوا دامن جو نچوڑا جائے

    ہر قدم مرحلۂ مرگ تمنا ہے مگر

    زندگی پھر بھی ترا ساتھ نہ چھوڑا جائے

    آؤ پھر آج کریدیں دل افسردہ کی راکھ

    آؤ سوئی ہوئی یادوں کو جھنجھوڑا جائے

    ہو وہ توبہ کہ ہو ساغر کہ ہو پیمان وفا

    کچھ نہ کچھ آج تو مے خانے میں توڑا جائے

    زلف و رخ آج بھی عنوان غزل ہیں منظورؔ

    رخ ادھر گردش ایام کا موڑا جائے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY