خواہش جادۂ راحت سے نکلتا کیسے

اختر شمار

خواہش جادۂ راحت سے نکلتا کیسے

اختر شمار

MORE BYاختر شمار

    خواہش جادۂ راحت سے نکلتا کیسے

    دل مرا کوئے ملامت سے نکلتا کیسے

    سایۂ وہم و گماں چار طرف پھیلا ہے

    میں ابھی کرب و اذیت سے نکلتا کیسے

    میری رسوائی اگر ساتھ نہ دیتی میرا

    یوں سر بزم میں عزت سے نکلتا کیسے

    میری نظریں جو نہ پڑتیں تو وہاں پچھلی شب

    اک ستارا سا تری چھت سے نکلتا کیسے

    میں کہ برباد ہوا دید کی خاطر جس کی

    وہ مرے دیدۂ حیرت سے نکلتا کیسے

    اس کے دم ہی سے تو قائم ہے مرا جاہ و جلال

    وہ مرے دل کی حکومت سے نکلتا کیسے

    جاگ بیٹھا ہوں تو دل ڈوبا نہیں ہے اخترؔ

    سویا رہتا تو مصیبت سے نکلتا کیسے

    مأخذ :
    • کتاب : hamen terii tamnnaa hai (Pg. 29)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY