کسی کے وعدۂ فردا پر اعتبار تو ہے

علیم اختر

کسی کے وعدۂ فردا پر اعتبار تو ہے

علیم اختر

MORE BY علیم اختر

    کسی کے وعدۂ فردا پر اعتبار تو ہے

    طلوع صبح قیامت کا انتظار تو ہے

    مری جگہ نہ رہی تیری بزم میں لیکن

    تری زباں پہ مرا ذکر ناگوار تو ہے

    متاع درد کو دل سے عزیز رکھتا ہوں

    کہ یہ کسی کی محبت کی یادگار تو ہے

    یہ اور بات کہ اقرار کر سکیں نہ کبھی

    مری وفا کا مگر ان کو اعتبار تو ہے

    مقام دل کوئی منزل نہ بن سکا نہ سہی

    تری نگاہ محبت کی رہ گزار تو ہے

    وہ ذوق دید نہ شوق نظارہ اب لیکن

    مری نظر کو ابھی ان کا انتظار تو ہے

    اگر نگاہ کرم شیوہ اب نہیں نہ سہی

    مری طرف ابھی چشم ستم شعار تو ہے

    یہ اور بات نصیب نظر نہیں لیکن

    نفس نفس ترے جلووں سے ہمکنار تو ہے

    زمانہ ساتھ نہیں دے رہا تو کیا اخترؔ

    ابھی جلو میں مرے بخت سازگار تو ہے

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    کسی کے وعدۂ فردا پر اعتبار تو ہے نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY