کوئی تہمت ہو مرے نام چلی آتی ہے

انجم خیالی

کوئی تہمت ہو مرے نام چلی آتی ہے

انجم خیالی

MORE BYانجم خیالی

    کوئی تہمت ہو مرے نام چلی آتی ہے

    جیسے بازار میں ہر گھر سے گلی آتی ہے

    تری یاد آتی ہے اب کوئی کہانی بن کر

    یا کسی نظم کے سانچے میں ڈھلی آتی ہے

    اب بھی پہلے کی طرح پیش رو رنگ و صدا

    ایک منہ بند سی بے رنگ کلی آتی ہے

    چل کے دیکھیں تو سہی کون ہے یہ دختر رز

    روز اول سے جو بد نام چلی آتی ہے

    یہ مرے کرب کا عالم رہے یا رب آباد

    اس زمیں سے بوئے اولاد علیؔ آتی ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY