کچھ ایسا تھا گمرہی کا سایا

عبدالعزیز فطرت

کچھ ایسا تھا گمرہی کا سایا

عبدالعزیز فطرت

MORE BYعبدالعزیز فطرت

    کچھ ایسا تھا گمرہی کا سایا

    اپنا ہی پتا نہ ہم نے پایا

    دل کس کے جمال میں ہوا گم

    اکثر یہ خیال ہی نہ آیا

    ہم تو ترے ذکر کا ہوئے جزو

    تو نے ہمیں کس طرح بھلایا

    اے دوست تری نظر سے میرا

    ایوان نگاہ جگ مسکایا

    خورشید اسی کو ہم نے جانا

    جو ذرہ زمیں پہ مسکرایا

    مقصود تھی تازگی چمن کی

    ہم نے رگ جاں سے خوں بہایا

    افتاد ہے سب کی اپنی اپنی

    کس نے ہے کسی کا غم بٹایا

    محرومئ جاوداں ہے اور میں

    میں ذوق طلب سے باز آیا

    ہر غم پہ ہے میرے نام کی مہر

    فطرتؔ کوئی غم نہیں پرایا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY