کچھ بھی ہو وہ اب دل سے جدا ہو نہیں سکتے

اسد بھوپالی

کچھ بھی ہو وہ اب دل سے جدا ہو نہیں سکتے

اسد بھوپالی

MORE BY اسد بھوپالی

    کچھ بھی ہو وہ اب دل سے جدا ہو نہیں سکتے

    ہم مجرم توہین وفا ہو نہیں سکتے

    اے موج حوادث تجھے معلوم نہیں کیا

    ہم اہل محبت ہیں فنا ہو نہیں سکتے

    اتنا تو بتا جاؤ خفا ہونے سے پہلے

    وہ کیا کریں جو تم سے خفا ہو نہیں سکتے

    اک آپ کا در ہے مری دنیائے عقیدت

    یہ سجدے کہیں اور ادا ہو نہیں سکتے

    احباب پہ دیوانے اسدؔ کیسا بھروسہ

    یہ زہر بھرے گھونٹ روا ہو نہیں سکتے

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    کچھ بھی ہو وہ اب دل سے جدا ہو نہیں سکتے نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY