کچھ کہنے کا وقت نہیں یہ کچھ نہ کہو خاموش رہو

ابن انشا

کچھ کہنے کا وقت نہیں یہ کچھ نہ کہو خاموش رہو

ابن انشا

MORE BYابن انشا

    کچھ کہنے کا وقت نہیں یہ کچھ نہ کہو خاموش رہو

    اے لوگو خاموش رہو ہاں اے لوگو خاموش رہو

    سچ اچھا پر اس کے جلو میں زہر کا ہے اک پیالہ بھی

    پاگل ہو کیوں ناحق کو سقراط بنو خاموش رہو

    ان کا یہ کہنا سورج ہی دھرتی کے پھیرے کرتا ہے

    سر آنکھوں پر سورج ہی کو گھومنے دو خاموش رہو

    محبس میں کچھ حبس ہے اور زنجیر کا آہن چبھتا ہے

    پھر سوچو ہاں پھر سوچو ہاں پھر سوچو خاموش رہو

    گرم آنسو اور ٹھنڈی آہیں من میں کیا کیا موسم ہیں

    اس بگیا کے بھید نہ کھولو سیر کرو خاموش رہو

    آنکھیں موند کنارے بیٹھو من کے رکھو بند کواڑ

    انشاؔ جی لو دھاگا لو اور لب سی لو خاموش رہو

    مآخذ:

    • کتاب : Is Basti ke ik Kooche Men (Pg. 160)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY