کچھ محبت میں عجب شیوۂ دل دار رہا

ہجر ناظم علی خان

کچھ محبت میں عجب شیوۂ دل دار رہا

ہجر ناظم علی خان

MORE BY ہجر ناظم علی خان

    کچھ محبت میں عجب شیوۂ دل دار رہا

    مجھ سے انکار رہا غیر سے اقرار رہا

    کچھ سروکار نہیں جان رہے یا نہ رہے

    نہ رہا ان سے تو پھر کس سے سروکار رہا

    شب خلوت وہی حجت وہی تکرار رہی

    وہی قصہ وہی غصہ وہی انکار رہا

    طالب دید کو ظالم نے یہ لکھا خط میں

    اب قیامت پہ مرا وعدۂ دیدار رہا

    حال دل بزم میں اس شوخ سے ہم کہہ نہ سکے

    لب خاموش کی صورت لب اظہار رہا

    کچھ خبر ہے تجھے او چین سے سونے والے

    رات بھر کون تری یاد میں بیدار رہا

    اک نظر نزع میں دیکھی تھی کسی کی صورت

    مدتوں قبر میں بے چین دل زار رہا

    دل ہمارا تھا ہمارا تھا ہمارا لیکن

    ان کے قابو میں رہا ان کا طرفدار رہا

    عمر ہنس کھیل کے اس طرح گزاری اے ہجرؔ

    دوست کا دوست رہا یار کا میں یار رہا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY