کرسئ دل پہ ترے جاتے ہی درد آ بیٹھے

فرحت احساس

کرسئ دل پہ ترے جاتے ہی درد آ بیٹھے

فرحت احساس

MORE BYفرحت احساس

    کرسئ دل پہ ترے جاتے ہی درد آ بیٹھے

    جیسے آئینۂ بے کار پہ گرد آ بیٹھے

    پہلی منزل پہ ہی ٹکرا کے گرے دنیا سے

    پاؤں تڑوا کے تمام اہل نورد آ بیٹھے

    دعوت دید جو اس قامت رنگیں کی ملی

    بزم میں ہم بھی لیے یہ رخ زرد آ بیٹھے

    عورتیں کام پہ نکلی تھیں بدن گھر رکھ کر

    جسم خالی جو نظر آئے تو مرد آ بیٹھے

    شہر اک سمت سے جنگل سا نظر آنے لگا

    شہر کے دل میں بھی کیا دشت نورد آ بیٹھے

    فرحتؔ احساس کی تعظیم میں اٹھا تھا سماج

    اور وہ اس کی جگہ صورت فرد آ بیٹھے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY