کشادہ دست کرم جب وہ بے نیاز کرے

علامہ اقبال

کشادہ دست کرم جب وہ بے نیاز کرے

علامہ اقبال

MORE BYعلامہ اقبال

    INTERESTING FACT

    حصہ اول : 1905 تک ( بانگ درا)

    کشادہ دست کرم جب وہ بے نیاز کرے

    نیاز مند نہ کیوں عاجزی پہ ناز کرے

    بٹھا کے عرش پہ رکھا ہے تو نے اے واعظ

    خدا وہ کیا ہے جو بندوں سے احتراز کرے

    مری نگاہ میں وہ رند ہی نہیں ساقی

    جو ہوشیاری و مستی میں امتیاز کرے

    مدام گوش بہ دل رہ یہ ساز ہے ایسا

    جو ہو شکستہ تو پیدا نوائے راز کرے

    کوئی یہ پوچھے کہ واعظ کا کیا بگڑتا ہے

    جو بے عمل پہ بھی رحمت وہ بے نیاز کرے

    سخن میں سوز الٰہی کہاں سے آتا ہے

    یہ چیز وہ ہے کہ پتھر کو بھی گداز کرے

    تمیز لالہ و گل سے ہے نالۂ بلبل

    جہاں میں وا نہ کوئی چشم امتیاز کرے

    غرور زہد نے سکھلا دیا ہے واعظ کو

    کہ بندگان خدا پر زباں دراز کرے

    ہوا ہو ایسی کہ ہندوستاں سے اے اقبالؔ

    اڑا کے مجھ کو غبار رہ حجاز کرے

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    نامعلوم

    نامعلوم

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY