کیا ہوا گر شیخ یارو حاجی الحرمین ہے

شیخ ظہور الدین حاتم

کیا ہوا گر شیخ یارو حاجی الحرمین ہے

شیخ ظہور الدین حاتم

MORE BYشیخ ظہور الدین حاتم

    کیا ہوا گر شیخ یارو حاجی الحرمین ہے

    طوف دل کا حق میں اس کے دین فرض عین ہے

    رات دن جاری ہیں کچھ پیدا نہیں ان کا کنار

    میرے چشموں کا دو آبا مجمع البحرین ہے

    غیر جاوے اس کے گھر اور وہ نہ آوے گھر مرے

    دونوں باتیں دوستاں حق میں مرے خبرین ہے

    وقت فرصت دے تو مل بیٹھیں کہیں باہم دو دم

    ایک مدت سے دلوں میں حسرت طرفین ہے

    آؤ اے ساقی شتابی آ کے شمع بزم ہو

    ساری مجلس انتظاری میں تری بے چین ہے

    دو قرن گزرے اسی فکر سخن میں روز و شب

    ریختے کے فن میں حاتمؔ آج ذوالقرنین ہے

    مأخذ :
    • کتاب : Diwan-e-Zadah (Pg. 324)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY