کیا کہیں کیا حسن کا عالم رہا

بقا بلوچ

کیا کہیں کیا حسن کا عالم رہا

بقا بلوچ

MORE BY بقا بلوچ

    کیا کہیں کیا حسن کا عالم رہا

    وہ رہے اور آئنہ مدھم رہا

    زندگی سے زندگی روٹھی رہی

    آدمی سے آدمی برہم رہا

    رہ گئی ہیں اب وہاں پرچھائیاں

    اک زمانے میں جہاں آدم رہا

    پاس رہ کر بھی رہے ہم دور دور

    اس طرح اس کا مرا سنگم رہا

    تو مرے افکار میں ہر پل رہی

    میں ترے احساس میں ہر دم رہا

    جی رہے تھے ہم تو دنیا تھی خفا

    مر گئے تو دیر تک ماتم رہا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY