کیا کہوں اس سے کہ جو بات سمجھتا ہی نہیں

فاطمہ حسن

کیا کہوں اس سے کہ جو بات سمجھتا ہی نہیں

فاطمہ حسن

MORE BY فاطمہ حسن

    کیا کہوں اس سے کہ جو بات سمجھتا ہی نہیں

    وہ تو ملنے کو ملاقات سمجھتا ہی نہیں

    ہم نے دیکھا ہے فقط خواب کھلی آنکھوں سے

    خواب تھی وصل کی وہ رات سمجھتا ہی نہیں

    میں نے پہنچایا اسے جیت کے ہر خانے میں

    میری بازی تھی مری مات سمجھتا ہی نہیں

    رات پروائی نے اس کو بھی جگایا ہوگا

    رات کیوں کٹ نہ سکی رات سمجھتا ہی نہیں

    شاعری کا کوئی انداز سمجھتا ہے انہیں

    وہ محبت کی روایات سمجھتا ہی نہیں

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    فاطمہ حسن

    فاطمہ حسن

    RECITATIONS

    فاطمہ حسن

    فاطمہ حسن

    فاطمہ حسن

    کیا کہوں اس سے کہ جو بات سمجھتا ہی نہیں فاطمہ حسن

    ذریعہ:

    • Book: Beesveen Sadi Ki Behtareen Ishqiya Ghazlen (Pg. 168)
    0
    COMMENT
    COMMENTS
    تبصرے دیکھیے

    Critique mode ON

    Tap on any word to submit a critique about that line. Word-meanings will not be available while you’re in this mode.

    OKAY

    SUBMIT CRITIQUE

    نام

    ای-میل

    تبصره

    Thanks, for your feedback

    Critique draft saved

    EDIT DISCARD

    CRITIQUE MODE ON

    TURN OFF

    Discard saved critique?

    CANCEL DISCARD

    CRITIQUE MODE ON - Click on a line of text to critique

    TURN OFF

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites