کیوں کسی سے وفا کرے کوئی

یگانہ چنگیزی

کیوں کسی سے وفا کرے کوئی

یگانہ چنگیزی

MORE BY یگانہ چنگیزی

    کیوں کسی سے وفا کرے کوئی

    دل نہ مانے تو کیا کرے کوئی

    نہ دوا چاہیے مجھے نہ دعا

    کاش اپنی دوا کرے کوئی

    مفلسی میں مزاج شاہانہ

    کس مرض کی دوا کرے کوئی

    درد ہو تو دوا بھی ممکن ہے

    وہم کی کیا دوا کرے کوئی

    ہنس بھی لیتا ہوں اوپری دل سے

    جی نہ بہلے تو کیا کرے کوئی

    موت بھی آ سکی نہ منھ مانگی

    اور کیا التجا کرے کوئی

    درد دل پھر کہیں نہ کروٹ لے

    اب نہ چونکے خدا کرے کوئی

    عشق بازی کی انتہا معلوم

    شوق سے ابتدا کرے کوئی

    کوہ کن اور کیا بنا لیتا

    بن کے بگڑے تو کیا کرے کوئی

    اپنے دم کی ہے روشنی ساری

    دیدۂ دل تو وا کرے کوئی

    شمع کیا شمع کا اجالا کیا

    دن چڑھے سامنا کرے کوئی

    غالب اور میرزا یگانہؔ کا

    آج کیا فیصلہ کرے کوئی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY