لٹتے ہیں بہت سہل کہ دن ایسے کڑے ہیں

جلیل عالیؔ

لٹتے ہیں بہت سہل کہ دن ایسے کڑے ہیں

جلیل عالیؔ

MORE BYجلیل عالیؔ

    لٹتے ہیں بہت سہل کہ دن ایسے کڑے ہیں

    گھر میں نہیں جیسے کہیں جنگل میں پڑے ہیں

    سر سانجھ کے کب ہیں فقط اک شور انا ہے

    چاہت کے قبیلے نہیں خواہش کے دھڑے ہیں

    کس رنگ سے تم سنگ زمانے کے چلے ہو

    ہر ننگ میں نشے تمہیں کچھ اور چڑھے ہیں

    دن رات ہیں بے مہر ہواؤں کے حوالے

    پتوں کی طرح جیسے درختوں سے جھڑے ہیں

    دنیا تو ہے دنیا کہ وہ دشمن ہے سدا کی

    سو بار ترے عشق میں ہم خود سے لڑے ہیں

    یلغار کروں کیا مرے پندار کے پرچم

    رستے میں پہاڑوں کی طرح آن کھڑے ہیں

    اتنے بھی تہی دست تعلق نہیں عالؔی

    اس شہر میں کچھ اپنے بھی مشرب کے تھڑے ہیں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY