میں تلخیٔ حیات سے گھبرا کے پی گیا

ساغر صدیقی

میں تلخیٔ حیات سے گھبرا کے پی گیا

ساغر صدیقی

MORE BY ساغر صدیقی

    میں تلخیٔ حیات سے گھبرا کے پی گیا

    غم کی سیاہ رات سے گھبرا کے پی گیا

    اتنی دقیق شے کوئی کیسے سمجھ سکے

    یزداں کے واقعات سے گھبرا کے پی گیا

    چھلکے ہوئے تھے جام پریشاں تھی زلف یار

    کچھ ایسے حادثات سے گھبرا کے پی گیا

    میں آدمی ہوں کوئی فرشتہ نہیں حضور

    میں آج اپنی ذات سے گھبرا کے پی گیا

    دنیائے حادثات ہے اک دردناک گیت

    دنیائے حادثات سے گھبرا کے پی گیا

    کانٹے تو خیر کانٹے ہیں اس کا گلہ ہی کیا

    پھولوں کی واردات سے گھبرا کے پی گیا

    ساغرؔ وہ کہہ رہے تھے کہ پی لیجیے حضور

    ان کی گزارشات سے گھبرا کے پی گیا

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    نصرت فتح علی خان

    نصرت فتح علی خان

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    میں تلخیٔ حیات سے گھبرا کے پی گیا نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY