مر کے ٹوٹا ہے کہیں سلسلۂ قید حیات (ردیف .. ے)

فانی بدایونی

مر کے ٹوٹا ہے کہیں سلسلۂ قید حیات (ردیف .. ے)

فانی بدایونی

MORE BYفانی بدایونی

    مر کے ٹوٹا ہے کہیں سلسلۂ قید حیات

    مگر اتنا ہے کہ زنجیر بدل جاتی ہے

    اثر عشق تغافل بھی ہے بیداد بھی ہے

    وہی تقصیر ہے تعزیر بدل جاتی ہے

    کہتے کہتے مرا افسانہ گلہ ہوتا ہے

    دیکھتے دیکھتے تقدیر بدل جاتی ہے

    روز ہے درد محبت کا نرالا انداز

    روز دل میں تری تصویر بدل جاتی ہے

    گھر میں رہتا ہے ترے دم سے اجالا ہی کچھ اور

    مہ و خورشید کی تنویر بدل جاتی ہے

    غم نصیبوں میں ہے فانیؔ غم دنیا ہو کہ عشق

    دل کی تقدیر سے تدبیر بدل جاتی ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY