اے حسن لالہ فام! ذرا آنکھ تو ملا

ساغر صدیقی

اے حسن لالہ فام! ذرا آنکھ تو ملا

ساغر صدیقی

MORE BYساغر صدیقی

    اے حسن لالہ فام! ذرا آنکھ تو ملا

    خالی پڑے ہیں جام! ذرا آنکھ تو ملا

    کہتے ہیں آنکھ آنکھ سے ملنا ہے بندگی

    دنیا کے چھوڑ کام! ذرا آنکھ تو ملا

    کیا وہ نہ آج آئیں گے تاروں کے ساتھ ساتھ

    تنہائیوں کی شام! ذرا آنکھ تو ملا

    یہ جام یہ سبو یہ تصور کی چاندنی

    ساقی کہاں مدام! ذرا آنکھ تو ملا

    ساقی مجھے بھی چاہئے اک جام آرزو

    کتنے لگیں گے دام! ذرا آنکھ تو ملا

    پامال ہو نہ جائے ستاروں کی آبرو

    اے میرے خوش خرام! ذرا آنکھ تو ملا

    ہیں راہ کہکشاں میں ازل سے کھڑے ہوئے

    ساغرؔ ترے غلام! ذرا آنکھ تو ملا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY