فلک سے چاند ستاروں سے جام لینا ہے

بشیر بدر

فلک سے چاند ستاروں سے جام لینا ہے

بشیر بدر

MORE BYبشیر بدر

    فلک سے چاند ستاروں سے جام لینا ہے

    مجھے سحر سے نئی ایک شام لینا ہے

    کسے خبر کہ فرشتے غزل سمجھتے ہیں

    خدا کے سامنے کافر کا نام لینا ہے

    معاملہ ہے ترا بدترین دشمن سے

    مرے عزیز محبت سے کام لینا ہے

    مہکتی زلفوں سے خوشبو چمکتی آنکھ سے دھوپ

    شبوں سے جام سحر کا سلام لینا ہے

    تمہاری چال کی آہستگی کے لہجے میں

    سخن سے دل کو مسلنے کا کام لینا ہے

    نہیں میں میرؔ کے در پر کبھی نہیں جاتا

    مجھے خدا سے غزل کا کلام لینا ہے

    بڑے سلیقے سے نوٹوں میں اس کو تلوا کر

    امیر شہر سے اب انتقام لینا ہے

    مأخذ :
    • کتاب : Aahat (Pg. 66)
    • Author : Bashir Badar
    • مطبع : M.R. Publications (2011)
    • اشاعت : 2011

    موضوعات :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY