متاع برگ و ثمر وہی ہے شباہت رنگ و بو وہی ہے

غلام حسین ساجد

متاع برگ و ثمر وہی ہے شباہت رنگ و بو وہی ہے

غلام حسین ساجد

MORE BYغلام حسین ساجد

    متاع برگ و ثمر وہی ہے شباہت رنگ و بو وہی ہے

    کھلا کہ اس بار بھی چمن پر گرفت دست نمو وہی ہے

    حکایت عشق سے بھی دل کا علاج ممکن نہیں کہ اب بھی

    فراق کی تلخیاں وہی ہیں وصال کی آرزو وہی ہے

    بدل دیے ہیں کسی نے افسوں سے کام لے کر تمام مہرے

    کہ سحر امروز کے مقابل نہ میں وہی ہوں نہ تو وہی ہے

    زمیں پہ بہتی ہوئی یہ آنکھیں فلک پہ رکتے ہوئے یہ تارے

    سنا ہے یہ پھول ہیں اسی کے سنا ہے یہ آب جو وہی ہے

    مہ و ستارہ تو آئنے کے وجود سے منحرف ہوئے ہیں

    مگر تری چشم مہرباں کو چراغ سے گفتگو وہی ہے

    الجھ رہا ہے کوئی ستارہ طلسم اصطخر و نینوا سے

    کہ رب ''رع'' کے مقابلے میں ہوا ہے جو سرخ رو وہی ہے

    بہت گراں ہے مرے شب و روز پر یہ رنگ وصال ساجدؔ

    مگر وہی بے کلی ہے دل کی دماغ کو جستجو وہی ہے

    مآخذ:

    • کتاب : Funoon (Monthly) (Pg. 389)
    • Author : Ahmad Nadeem Qasmi
    • مطبع : 4 Maklood Road, Lahore (Edition Nov. Dec. 1985,Issue No. 23)
    • اشاعت : Edition Nov. Dec. 1985,Issue No. 23

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY