بجلیاں ٹوٹ پڑیں جب وہ مقابل سے اٹھا

فانی بدایونی

بجلیاں ٹوٹ پڑیں جب وہ مقابل سے اٹھا

فانی بدایونی

MORE BYفانی بدایونی

    بجلیاں ٹوٹ پڑیں جب وہ مقابل سے اٹھا

    مل کے پلٹی تھیں نگاہیں کہ دھواں دل سے اٹھا

    جلوہ محسوس سہی آنکھ کو آزاد تو کر

    قید آداب تماشا بھی تو محفل سے اٹھا

    پھر تو مضراب جنوں ساز انا لیلیٰ چھیڑ

    ہائے وہ شور انا القیس کہ محمل سے اٹھا

    اختیار ایک ادا تھی مری مجبوری کی

    لطف سعی عمل اس مطلب حاصل سے اٹھا

    عمر امید کے دو دن بھی گراں تھے ظالم

    بار فردا نہ ترے وعدۂ باطل سے اٹھا

    خبر قافلۂ گم شدہ کس سے پوچھوں

    اک بگولہ بھی نہ خاک رہ منزل سے اٹھا

    ہوش جب تک ہے گلا گھونٹ کے مر جانے کا

    دم شمشیر کا احساں ترے بسمل سے اٹھا

    موت ہستی پہ وہ تہمت تھی کہ آساں نہ اٹھی

    زندگی مجھ پہ وہ الزام کہ مشکل سے اٹھا

    کس کی کشتی تہ گرداب فنا جا پہنچی

    شور لبیک جو فانیؔ لب ساحل سے اٹھا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے