کچھ دفن ہے اور سانس لیے جاتا ہے

سہیل احمد زیدی

کچھ دفن ہے اور سانس لیے جاتا ہے

سہیل احمد زیدی

MORE BYسہیل احمد زیدی

    کچھ دفن ہے اور سانس لیے جاتا ہے

    اک سانپ ہے جو قلب میں لہراتا ہے

    اک گونج ہے جو خون میں چکراتی ہے

    اک راز ہے پر پیچ ہوا جاتا ہے

    اک شور ہے جو کچھ نہیں سننے دیتا

    اک گھر تھا جو بازار ہوا جاتا ہے

    اک نرم کلی ہے جو کھلی پڑتی ہے

    اک دشت بلا ہے کہ جلا جاتا ہے

    اک خوف ہے جو کچھ نہیں کرنے دیتا

    اک خواب ہے جو نیند میں تڑپاتا ہے

    دو پاؤں ہیں جو ہار کے رک جاتے ہیں

    اک سر ہے جو دیوار سے ٹکراتا ہے

    مأخذ :
    • کتاب : Mujalla Dastavez (Pg. 266)
    • Author : Aziz Nabeel
    • مطبع : Edarah Dastavez (2010)
    • اشاعت : 2010

    موضوعات

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے