میرا مالک جب توفیق ارزانی کرتا ہے

افتخار عارف

میرا مالک جب توفیق ارزانی کرتا ہے

افتخار عارف

MORE BY افتخار عارف

    میرا مالک جب توفیق ارزانی کرتا ہے

    گہرے زرد زمین کی رنگت دھانی کرتا ہے

    بجھتے ہوئے دیئے کی لو اور بھیگی آنکھ کے بیچ

    کوئی تو ہے جو خوابوں کی نگرانی کرتا ہے

    مالک سے اور مٹی سے اور ماں سے باغی شخص

    درد کے ہر میثاق سے رو گردانی کرتا ہے

    یادوں سے اور خوابوں سے اور امیدوں سے ربط

    ہو جائے تو جینے میں آسانی کرتا ہے

    کیا جانے کب کس ساعت میں طبع رواں ہو جائے

    یہ دریا بے موسم بھی طغیانی کرتا ہے

    دل پاگل ہے روز نئی نادانی کرتا ہے

    آگ میں آگ ملاتا ہے پھر پانی کرتا ہے

    RECITATIONS

    افتخار عارف

    افتخار عارف

    افتخار عارف

    میرا مالک جب توفیق ارزانی کرتا ہے افتخار عارف

    مآخذ:

    • Book: Mahr-e-Do neem (Pg. 21)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY