ملا جو کوئی یہاں رمز آشنا نہ مجھے

اختر ضیائی

ملا جو کوئی یہاں رمز آشنا نہ مجھے

اختر ضیائی

MORE BY اختر ضیائی

    ملا جو کوئی یہاں رمز آشنا نہ مجھے

    وبال ہوش رہا حرف محرمانہ مجھے

    اداس پھرتی ہے شاداب وادیوں کی مہک

    ہے کائنات یہی کنج آشیانہ مجھے

    عدو کی سنگ زنی کی نہیں مجھے پروا

    ترے کرم کا میسر ہے شامیانہ مجھے

    کوئی علاج غم زندگی بتا واعظ

    سنے ہوئے جو فسانے ہیں پھر سنا نہ مجھے

    سبک سری میں زمین وطن بھی تنگ ہوئی

    کشاں کشاں لیے پھرتا ہے آب و دانہ مجھے

    مرے نصیب میں ہے کشت جاں کی ویرانی

    نہ آئی راس رہ و رسم عاشقانہ مجھے

    بھٹک رہا ہوں اسی کی تلاش میں اخترؔ

    کہ جس دیار کو چھوڑے ہوا زمانہ مجھے

    مآخذ:

    • Book : ajnabii musamo.n ki khushboo (Pg. 50)
    • Author : akhtar ziyaa.ii
    • مطبع : zaahid bashiir printer lahore (1992)
    • اشاعت : 1992

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY