کہاں تک غیر جاسوسی کے لینے کو لگا آوے

میر تقی میر

کہاں تک غیر جاسوسی کے لینے کو لگا آوے

میر تقی میر

MORE BYمیر تقی میر

    کہاں تک غیر جاسوسی کے لینے کو لگا آوے

    الٰہی اس بلائے ناگہاں پر بھی بلا آوے

    رکا جاتا ہے جی اندر ہی اندر آج گرمی سے

    بلا سے چاک ہی ہو جاوے سینہ ٹک ہوا آوے

    ترا آنا ہی اب مرکوز ہے ہم کو دم آخر

    یہ جی صدقے کیا تھا پھر نہ آوے تن میں یا آوے

    یہ رسم آمد و رفت دیار عشق تازہ ہے

    ہنسی وہ جائے میری اور رونا یوں چلا آوے

    اسیری نے چمن سے میری دل گرمی کو دھو ڈالا

    وگرنہ برق جا کر آشیاں میرا جلا آوے

    امید رحم ان سے سخت نافہمی ہے عاشق کی

    یہ بت سنگیں دلی اپنی نہ چھوڑیں گر خدا آوے

    یہ فن عشق ہے آوے اسے طینت میں جس کی ہو

    تو زاہد پیر نا بالغ ہے بے تہ تجھ کو کیا آوے

    ہمارے دل میں آنے سے تکلف غم کو بے جا ہے

    یہ دولت خانہ ہے اس کا وہ جب چاہے چلا آوے

    برنگ بوئے غنچہ عمر اک ہی رنگ میں گزرے

    میسر میرؔ صاحب گر دل بے مدعا آوے

    مآخذ :
    • کتاب : MIRIYAAT - Diwan No- 1, Ghazal No- 0563
    • کتاب : MIRIYAAT - Diwan No- 1, Ghazal No- 0563
    • کتاب : मीरियात - दीवान नंo- 1, ग़ज़ल नंo- 0563

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY