مرے دل میں ہے کہ پوچھوں کبھی مرشد مغاں سے

عبد المجید سالک

مرے دل میں ہے کہ پوچھوں کبھی مرشد مغاں سے

عبد المجید سالک

MORE BYعبد المجید سالک

    مرے دل میں ہے کہ پوچھوں کبھی مرشد مغاں سے

    کہ ملا جمال ساقی کو یہ طنطنہ کہاں سے

    وہ یہ کہہ رہے ہیں ہم کو ترے حال کی خبر کیا

    تو اٹھا سکا نگاہیں نہ بتا سکا زباں سے

    جو انہیں وفا کی سوجھی تو نہ زیست نے وفا کی

    ابھی آ کے وہ نہ بیٹھے کہ ہم اٹھ گئے جہاں سے

    میں عدم کے لالہ زاروں میں نواگر ازل تھا

    مجھے کھینچ لائی ظالم تری آرزو کہاں سے

    مری سر نوشت میں تھا وہی داغ نامرادی

    جو ملا مری جبیں کو ترے سنگ آستاں سے

    بچے بجلیوں کی زد سے وہی طائران دانا

    جو کڑک چمک سے پہلے نکل آئے آشیاں سے

    یہ ہے ماجرائے وحشت کہ ملا سراغ محمل

    نہ غبار کارواں سے نہ درائے کارواں سے

    نہیں کچھ سمجھ میں آتا یہ عجیب ماجرا ہے

    کہ زمیں کے رہنے والوں کو ہدایت آسماں سے

    شب غم جو آئی سالکؔ مٹے باطنی اندھیرے

    مرا دل ہوا منور تب و تاب جاوداں سے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY