مثال تار نظر کیا نظر نہیں آتا

مرزارضا برق ؔ

مثال تار نظر کیا نظر نہیں آتا

مرزارضا برق ؔ

MORE BY مرزارضا برق ؔ

    مثال تار نظر کیا نظر نہیں آتا

    کبھی خیال میں موئے کمر نہیں آتا

    ہمارے عیب نے بے عیب کر دیا ہم کو

    یہی ہنر ہے کہ کوئی ہنر نہیں آتا

    محال ہے کہ مرے گھر وہ رات کو آئے

    کہ شب کو مہر درخشاں نظر نہیں آتا

    تمام خلق میں رہتی ہے دھوپ راتوں کو

    وہ مہر بام سے جب تک اتر نہیں آتا

    محال ہے کہ جہنم میں خلد سے جائیں

    جو در پر آپ کے جاتا ہے گھر نہیں آتا

    ہماری زیست میں تھے ساتھ کون کون اے برقؔ

    اب ایک فاتحہ کو قبر پر نہیں آتا

    RECITATIONS

    فصیح اکمل

    فصیح اکمل

    فصیح اکمل

    مثال تار نظر کیا نظر نہیں آتا فصیح اکمل

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY