محبت میں کوئی صدمہ اٹھانا چاہئے تھا

بشریٰ اعجاز

محبت میں کوئی صدمہ اٹھانا چاہئے تھا

بشریٰ اعجاز

MORE BY بشریٰ اعجاز

    محبت میں کوئی صدمہ اٹھانا چاہئے تھا

    بھلایا تھا جسے وہ یاد آنا چاہئے تھا

    گری تھیں گھر کی دیواریں تو صحن دل میں ہم کو

    گھروندے کا کوئی نقشہ بنانا چاہئے تھا

    اٹھانا چاہئے تھی راکھ شہر آرزو کی

    پھر اس کے بعد اک طوفان اٹھانا چاہئے تھا

    کوئی تو بات کرنا چاہئے تھی خود سے آخر

    کہیں تو مجھ کو بھی یہ دل لگانا چاہئے تھا

    کبھی تو اہتمام آرزو بھی تھا ضروری

    کوئی تو زیست کرنے کا بہانا چاہئے تھا

    مری اپنی اور اس کی آرزو میں فرق یہ تھا

    مجھے بس وہ اسے سارا زمانہ چاہئے تھا

    مآخذ:

    • Book: Beesveen Sadi Ki Behtareen Ishqiya Ghazlen (Pg. 61)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites