محبت رنگ دے جاتی ہے جب دل دل سے ملتا ہے

جلیلؔ مانک پوری

محبت رنگ دے جاتی ہے جب دل دل سے ملتا ہے

جلیلؔ مانک پوری

MORE BY جلیلؔ مانک پوری

    محبت رنگ دے جاتی ہے جب دل دل سے ملتا ہے

    مگر مشکل تو یہ ہے دل بڑی مشکل سے ملتا ہے

    کشش سے کب ہے خالی تشنہ کامی تشنہ کاموں کی

    کہ بڑھ کر موجۂ دریا لب ساحل سے ملتا ہے

    لٹاتے ہیں وہ دولت حسن کی باور نہیں آتا

    ہمیں تو ایک بوسہ بھی بڑی مشکل سے ملتا ہے

    گلے مل کر وہ رخصت ہو رہے ہیں ہائے کیا کہنے

    یہ حالت ہے کہ بسمل جس طرح بسمل سے ملتا ہے

    شہادت کی خوشی ایسی ہے مشتاق شہادت کو

    کبھی خنجر سے ملتا ہے کبھی قاتل سے ملتا ہے

    وہ مجھ کو دیکھ کر کچھ اپنے دل میں جھینپ جاتے ہیں

    کوئی پروانہ جب شمع سر محفل سے ملتا ہے

    خدا جانے غبار راہ ہے یا قیس ہے لیلیٰ

    کوئی آغوش کھولے پردۂ محمل سے ملتا ہے

    جلیلؔ اس کی طلب سے باز رہنا سخت غفلت ہے

    غنیمت جانیے اس کو کہ وہ مشکل سے ملتا ہے

    RECITATIONS

    فصیح اکمل

    فصیح اکمل

    فصیح اکمل

    محبت رنگ دے جاتی ہے جب دل دل سے ملتا ہے فصیح اکمل

    0
    COMMENT
    COMMENTS
    تبصرے دیکھیے

    Critique mode ON

    Tap on any word to submit a critique about that line. Word-meanings will not be available while you’re in this mode.

    OKAY

    SUBMIT CRITIQUE

    نام

    ای-میل

    تبصره

    Thanks, for your feedback

    Critique draft saved

    EDIT DISCARD

    CRITIQUE MODE ON

    TURN OFF

    Discard saved critique?

    CANCEL DISCARD

    CRITIQUE MODE ON - Click on a line of text to critique

    TURN OFF

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Favorite added successfully

    Favorite removed successfully