محبت سوز بھی ہے ساز بھی ہے

عرش ملسیانی

محبت سوز بھی ہے ساز بھی ہے

عرش ملسیانی

MORE BYعرش ملسیانی

    محبت سوز بھی ہے ساز بھی ہے

    خموشی بھی ہے یہ آواز بھی ہے

    نشیمن کے لیے بیتاب طائر

    وہاں پابندیٔ پرواز بھی ہے

    خموشی پر بھروسا کرنے والے

    خموشی درد کی غماز بھی ہے

    ہے معراج خرد بھی عرش اعظم

    جنوں کا فرش پا انداز بھی ہے

    دل بیگانہ خود دنیا میں تیرا

    کوئی ہم دم کوئی ہم راز بھی ہے

    کبھی محتاج لے کا بھی نہیں یہ

    کبھی نغمہ رہین ساز بھی ہے

    کبھی تو دل ہے محو بے نیازی

    کبھی طوف حریم ناز بھی ہے

    ترانہ ہائے ساز زندگی میں

    اک آواز شکست ساز بھی ہے

    مآخذ
    • کتاب : Aazadi ke baad dehli men urdu gazal (Pg. 255)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY