مونس دل کوئی نغمہ کوئی تحریر نہیں

احمد مشتاق

مونس دل کوئی نغمہ کوئی تحریر نہیں

احمد مشتاق

MORE BY احمد مشتاق

    مونس دل کوئی نغمہ کوئی تحریر نہیں

    حرف میں رس نہیں آواز میں تاثیر نہیں

    آ ہی جاتا ہے اجڑتی ہوئی دنیا کا خیال

    باور آیا کہ ترا درد ہمہ گیر نہیں

    ہجر اک وقفۂ بیدار ہے دو نیندوں میں

    وصل اک خواب ہے جس کی کوئی تعبیر نہیں

    میرے اطراف یہ زنجیر علائق کیسی

    زندگی جرم سہی قابل تعزیر نہیں

    کس طرح پائیں اس افسردہ مزاجی سے نجات

    ہمدمو ہم سخنو کیا کوئی تدبیر نہیں

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    مونس دل کوئی نغمہ کوئی تحریر نہیں نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY