مجھ کو مری شکست کی دوہری سزا ملی

ساقی فاروقی

مجھ کو مری شکست کی دوہری سزا ملی

ساقی فاروقی

MORE BYساقی فاروقی

    مجھ کو مری شکست کی دوہری سزا ملی

    تجھ سے بچھڑ کے زندگی دنیا سے جا ملی

    اک قلزم حیات کی جانب چلی تھی عمر

    اک دن یہ جوئے تشنگی صحرا سے آ ملی

    یہ کیسی بے حسی ہے کہ پتھر ہوئی ہے آنکھ

    ویسے تو آنسوؤں کی کمک بارہا ملی

    میں کانپ اٹھا تھا خود کو وفادار دیکھ کر

    موج وفا کے پاس ہی موج فنا ملی

    دیوار ہجر پر تھے بہت صاحبوں کے نام

    یہ بستی فراق بھی شہرت سرا ملی

    پھر رود بے وفائی میں بہتا رہا یہ جسم

    یہ رنج ہے کہ تیری طرف سے دعا ملی

    وہ کون خوش نصیب تھے جو مطمئن پھرے

    مجھ کو تو اس نگاہ سے عسرت سوا ملی

    یہ عمر عمر کوئی تعاقب میں کیوں رہے

    یادوں میں گونجتی ہوئی کس کی صدا ملی

    جس کی ہوس کے واسطے دنیا ہوئی عزیز

    واپس ہوئے تو اس کی محبت خفا ملی

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    مجھ کو مری شکست کی دوہری سزا ملی نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY