مجھے تم شہرتوں کے درمیاں گمنام لکھ دینا

زبیر رضوی

مجھے تم شہرتوں کے درمیاں گمنام لکھ دینا

زبیر رضوی

MORE BYزبیر رضوی

    مجھے تم شہرتوں کے درمیاں گمنام لکھ دینا

    جہاں دریا ملے بے آب میرا نام لکھ دینا

    یہ سارا ہجر کا موسم یہ ساری خانہ ویرانی

    اسے اے زندگی میرے جنوں کے نام لکھ دینا

    تم اپنے چاند تارے کہکشاں چاہے جسے دینا

    مری آنکھوں پہ اپنی دید کی اک شام لکھ دینا

    مرے اندر پناہیں ڈھونڈتی پھرتی ہے خاموشی

    لب گویا مرے اندر بھی اک کہرام لکھ دینا

    وہ موسم جا چکا جس میں پرندے چہچہاتے تھے

    اب ان پیڑوں کی شاخوں پر سکوت شام لکھ دینا

    شبستانوں میں لو دیتے ہوئے کندن سے جسموں پر

    ہوا کی انگلیوں سے وصل کا پیغام لکھ دینا

    مأخذ :
    • کتاب : Sang-ge-Sada (Pg. 250)
    • Author : Zubair Razvi
    • مطبع : Zehne Jadid, New Delhi (2014)
    • اشاعت : 2014

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY