منہ پھیر کر وہ کہتے ہیں بس مان جائیے

بیخود دہلوی

منہ پھیر کر وہ کہتے ہیں بس مان جائیے

بیخود دہلوی

MORE BYبیخود دہلوی

    منہ پھیر کر وہ کہتے ہیں بس مان جائیے

    اس شرم اس لحاظ کے قربان جائیے

    بھولے نہیں ہیں ہم وہ مدارات رات کی

    جی چاہتا ہے پھر کہیں مہمان جائیے

    بولے وہ مسکرا کے بہت التجا کے بعد

    جی تو یہ چاہتا ہے تری مان جائیے

    آگے ہے گھر رقیب کا بس ساتھ ہو چکا

    اب آپ کا خدا ہے نگہبان جائیے

    الفت جتا کے دوست کو دشمن بنا لیا

    بیخودؔ تمہاری عقل کے قربان جائیے

    مأخذ :
    • کتاب : Intekhab-e-Sukhan(Jild-2) (Pg. 178)
    • Author : Hasrat Mohani
    • مطبع : uttar pradesh urdu academy (1983)
    • اشاعت : 1983

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY