یہ جب ہے کہ اک خواب سے رشتہ ہے ہمارا

شہریار

یہ جب ہے کہ اک خواب سے رشتہ ہے ہمارا

شہریار

MORE BY شہریار

    یہ جب ہے کہ اک خواب سے رشتہ ہے ہمارا

    دن ڈھلتے ہی دل ڈوبنے لگتا ہے ہمارا

    چہروں کے سمندر سے گزرتے رہے پھر بھی

    اک عکس کو آئینہ ترستا ہے ہمارا

    ان لوگوں سے کیا کہیے کہ کیا بیت رہی ہے

    احوال مگر تو تو سمجھتا ہے ہمارا

    ہر موڑ پہ پڑتا ہے ہمیں واسطہ اس سے

    دنیا سے الگ کہنے کو رستہ ہے ہمارا

    مآخذ:

    • Book: sooraj ko nikalta dekhoon (Pg. 362)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites