مسافر کے رستے بدلتے رہے

بشیر بدر

مسافر کے رستے بدلتے رہے

بشیر بدر

MORE BYبشیر بدر

    مسافر کے رستے بدلتے رہے

    مقدر میں چلنا تھا چلتے رہے

    مرے راستوں میں اجالا رہا

    دیے اس کی آنکھوں میں جلتے رہے

    کوئی پھول سا ہاتھ کاندھے پہ تھا

    مرے پاؤں شعلوں پہ جلتے رہے

    سنا ہے انہیں بھی ہوا لگ گئی

    ہواؤں کے جو رخ بدلتے رہے

    وہ کیا تھا جسے ہم نے ٹھکرا دیا

    مگر عمر بھر ہاتھ ملتے رہے

    محبت عداوت وفا بے رخی

    کرائے کے گھر تھے بدلتے رہے

    لپٹ کر چراغوں سے وہ سو گئے

    جو پھولوں پہ کروٹ بدلتے رہے

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    راجندر مہتا

    راجندر مہتا

    Tagged Under

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY