نہ اب رقیب نہ ناصح نہ غم گسار کوئی (ردیف .. ا)

فیض احمد فیض

نہ اب رقیب نہ ناصح نہ غم گسار کوئی (ردیف .. ا)

فیض احمد فیض

MORE BY فیض احمد فیض

    نہ اب رقیب نہ ناصح نہ غم گسار کوئی

    تم آشنا تھے تو تھیں آشنائیاں کیا کیا

    جدا تھے ہم تو میسر تھیں قربتیں کتنی

    بہم ہوئے تو پڑی ہیں جدائیاں کیا کیا

    پہنچ کے در پہ ترے کتنے معتبر ٹھہرے

    اگرچہ رہ میں ہوئیں جگ ہنسائیاں کیا کیا

    ہم ایسے سادہ دلوں کی نیاز مندی سے

    بتوں نے کی ہیں جہاں میں خدائیاں کیا کیا

    ستم پہ خوش کبھی لطف و کرم سے رنجیدہ

    سکھائیں تم نے ہمیں کج ادائیاں کیا کیا

    مآخذ:

    • کتاب : Nuskha Hai Wafa (Kulliyat-e-Faiz) (Pg. 537)
    • مطبع : Educational Publishing House (2009)
    • اشاعت : 2009

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY