نہ چشم تر بتاتی ہے نہ زخم سر بتاتے ہیں

خوشبیر سنگھ شادؔ

نہ چشم تر بتاتی ہے نہ زخم سر بتاتے ہیں

خوشبیر سنگھ شادؔ

MORE BYخوشبیر سنگھ شادؔ

    نہ چشم تر بتاتی ہے نہ زخم سر بتاتے ہیں

    وہ اک روداد جو سہمے ہوئے یہ گھر بتاتے ہیں

    میں اپنے آنسوؤں پر اس لئے قابو نہیں رکھتا

    کہ میرے دل کی حالت مجھ سے یہ بہتر بتاتے ہیں

    انہیں دل کی صداؤں پر بھلا کیسے یقیں ہوگا

    یہ آنکھیں تو وہی سنتی ہیں جو منظر بتاتے ہیں

    یقیناً پھر کسی نے جرأت پرواز کی ہوگی

    یہاں چاروں طرف بکھرے ہوئے یہ پر بتاتے ہیں

    کہاں گم ہو گیا ہے راستے میں وہ مسافر بھی

    نہ کچھ رہزن بتاتے ہیں نہ کچھ رہبر بتاتے ہیں

    ذرا یہ دھوپ ڈھل جائے تو ان کا حال پوچھیں گے

    یہاں کچھ سائے اپنے آپ کو پیکر بتاتے ہیں

    تجھے بھی شادؔ اپنی ذات سے باہر نکلنا ہے

    صدف کی قید سے نکلے ہوئے گوہر بتاتے ہیں

    مآخذ :
    • کتاب : Zara ye Dhoop Dhal Jaye (Pg. 9)
    • Author : Khushbir Singh Shaad
    • مطبع : Suman Parkashan, Bhadoriya Complex, Lucknow (2005)
    • اشاعت : 2005

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY