نہ دل سے آہ نہ لب سے صدا نکلتی ہے

احمد فراز

نہ دل سے آہ نہ لب سے صدا نکلتی ہے

احمد فراز

MORE BYاحمد فراز

    نہ دل سے آہ نہ لب سے صدا نکلتی ہے

    مگر یہ بات بڑی دور جا نکلتی ہے

    ستم تو یہ ہے کہ عہد ستم کے جاتے ہی

    تمام خلق مری ہم نوا نکلتی ہے

    وصال و ہجر کی حسرت میں جوئے کم مایہ

    کبھی کبھی کسی صحرا میں جا نکلتی ہے

    میں کیا کروں مرے قاتل نہ چاہنے پر بھی

    ترے لیے مرے دل سے دعا نکلتی ہے

    وہ زندگی ہو کہ دنیا فرازؔ کیا کیجے

    کہ جس سے عشق کرو بے وفا نکلتی ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY